1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ

Discussion in 'Library' started by نمرہ, Aug 13, 2014.

  1. نمرہ

    نمرہ Management

    ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﭘﮩﻠﮯ ﻭﻗﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ
    ﺍﻋﺮﺍﺑﯽ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﻃﻼﻕ ﺩﮮ
    ﺩﯼ ﮐﭽﮫ ﻟﻮﮒ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﭘﻮﭼﮭﻨﮯ
    ﺍﻭﺭ ﺳﺒﺒﺐ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﺁﺋﮯ ﮐﮧ ﺍُﺱ
    ﻧﮯ ﻃﻼﻕ ﮐﯿﻮﮞ ﺩﯼ
    ﻭﮦ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ : ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﺑﮭﯽ ﻋﺪﺕ
    ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﮏ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﯿﻮﯼ ﮨﮯ
    ﻣﺠﮭﮯ ﺍُﺱ ﺳﮯ ﺭﺟﻮﻉ ﮐﺎ ﺣﻖ
    ﺣﺎﺻﻞ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﯿﺐ
    ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﺩﻭﮞ ﺗﻮ ﺭﺟﻮﻉ
    ﮐﯿﺴﮯ ﮐﺮﻭﮞ ﮔﺎ ؟؟؟
    ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻋﺪﺕ ﺧﺘﻢ
    ﮨﻮﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺷﺨﺺ ﻧﮯ ﺭﺟﻮﻉ
    ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﻟﻮﮒ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ
    ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﺍﮔﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺏ
    ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﺗﻮ ﯾﮧ
    ﺍُﺱ ﮐﯽ ﺷﺨﺼﯿﺖ ﻣﺴﺦ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ
    ﻣﺘﺮﺍﺩﻑ ﮨﻮ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ
    ﺳﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ !!!
    ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﺣﺘٰﯽ ﮐﮧ ﺍﺱ
    ﻋﻮﺭﺕ ﮐﯽ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﮕﮧ ﺷﺎﺩﯼ
    ﮨﻮﮔﺌﯽ
    ﻟﻮﮒ ﭘﮭﺮ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺁﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﻃﻼﻕ
    ﮐﺎ ﺳﺒﺐ ﭘﻮﭼﮭﻨﮯ ﻟﮕﮯ
    ﺍﺱ ﺍﻋﺮﺍﺑﯽ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ: ﺍﺏ ﭼﻮﻧﮑﮧ ﻭﮦ
    ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﯽ ﻋﺰﺕ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﻭﺕ ﮐﺎ
    ﺗﻘﺎﺿﺎ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﭘﺮﺍﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺟﻨﺒﯽ
    ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﺑﻨﺪ
    ﺭﮐﮭﻮﮞ "۔
    ﮐﯿﺎ ﺁﺝ ﮐﮯ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮒ ؟
     
  2. UmerAmer

    UmerAmer VIP Member

    Very Nice
    Keep it up
     
  3. عمدہ شئیرنگ
    شکریہ​
     

Share This Page