1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

حالات کے قدموں پہ قلندر.. قتیل شفائی

Discussion in 'Qateel Shifai' started by PRINCE SHAAN, Jun 6, 2015.


  1. حالات کے قدموں پہ قلندر

    حالات کے قدموں پہ قلندر نہیں گرتا
    ٹوٹے بھی جو تارا تو زمیں پر نہیں گرتا



    گرتے ہیں سمندر میں بڑے شوق سے دریا
    لیکن کسی دریا میں سمندر نہیں گرتا



    سمجھو وہاں پھل دار شجر کوئی نہیں ہے
    وہ صحن کہ جِس میں کوئی پتھّر نہیں گرتا



    اِتنا تو ہوا فائدہ بارش کی کمی سے
    اِس شہر میں اب کوئی پھسل کر نہیں گرتا



    انعام کے لالچ میں لکھے مدح کسی کی
    اتنا تو کبھی کوئی سخنور نہیں گرتا



    حیراں ہے کوئی روز سے ٹھہرا ہوا پانی
    تالاب میں اب کیوں کوئی کنکر نہیں گرتا



    اُس بندہٴ خوددار پہ نبیوں کا ہے سایا
    جو بھوک میں بھی لقمہٴ تر پر نہیں گرتا



    کرنا ہے جو سر معرکہِ زیست تو سُن لے
    بے بازوئے حیدر، درِ خیبر نہیں گرتا



    قائم ہے قتیل اب یہ مرے سر کے ستوں پر
    بھونچال بھی آئے تو مرا گھر نہیں گرتا



    قتیل شفائی

     
  2. UmerAmer

    UmerAmer VIP Member

    Bohat Khoob
     
  3. IQBAL HASSAN

    IQBAL HASSAN Super Moderators

    :Assalam.O.Alaikum:
    [​IMG][​IMG][​IMG][​IMG]
    bohut hi zabardast sharing hain
    khush raho abad raho
    shukria
    [​IMG][​IMG][​IMG][​IMG]
     
  4. Smart Azhar

    Smart Azhar Cruise Member

    boht hi umda sharing hai
     
  5. sahil_jaan

    sahil_jaan Guest

    بہت عمدہ اشتراک
     

Share This Page