1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

perveen shakir

Discussion in 'Roman Urdu Poetry' started by *Ameer*, Aug 11, 2015.

  1. *Ameer*

    *Ameer* Senior Member

    'kamaal-e-zabt ko Khud bhii to aazamauNgii

    main apane haath se us kii dulhan sajauNgii

    supurd kar ke use chaaNdanii ke haathon

    main apane ghar ke aNdheron ko lauT auNgii

    badan ke karb ko vo bhii samajh na payega

    main dil men rouuNgii aaNkhon men muskurauNgii

    vo kyaa gayaa ke rafaaqat ke saare lutf gaye

    main kis se ruuTh sakuuNgii kise manauNgii

    vo ik rishtaa-e-benaam bhii nahiin lekin

    main ab bhii us ke ishaaron pe sar jhukauNgii

    bichhaa diyaa thaa gulaabon ke saath apanaa vajuud

    vo so ke uThe to Khvaabon kii raakh uThauNgii

    ab us kaa fan to kisii aur se manasuub huaa

    main kis kii nazm akele men gun_gunauNgii

    javaz DhuuNDh rahaa thaa nayii muhabbat kaa

    vo kah rahaa thaa ke main us ko bhuul jauNgii'
     
  2. UmerAmer

    UmerAmer VIP Member

    بہت ہی اچھی پوئٹری شئیر کی
    شئیر کرنے کے لئے شکریہ
    مزید ایسی شئیرنگ کا انتظار رہے گا​
     
  3. *Ameer*

    *Ameer* Senior Member

    Thanks dear
     

Share This Page