1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔
  2. آئی ٹی استاد کے لیے ٹیم ممبرز کی ضرورت ہے خواہش مند ممبرز ایڈمن سے رابطہ کریں
    Dismiss Notice
  3. Dismiss Notice

Jism Ki Khaal Utaar Di Gai (جسم کی کھال اُتار دی گئی )


آئی ٹی استاد کی ںئی ایپ ڈاونلوڈ کریں اور آئی ٹی استاد ٹیلی نار اور ذونگ نیٹ ورک پر فری استمال کریں

itustad

Discussion in 'General Topics Of Islam' started by MALIK__G, Oct 26, 2015.

General Topics Of Islam"/>Oct 26, 2015"/>

Share This Page

  1. MALIK__G
    Offline

    MALIK__G Regular Member
    • 36/49

    جسم کی کھال اُتار دی گئی

    حضرتِ سَیِّدُنا حَسَن بَصْرِی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ الْقَوِی سے منقول ہے کہ’’ سابقہ اُمتوں میں ’’ عُقَیْب ‘‘ نامی ایک عابد ایک پہاڑی پر اللہ عَزَّوَجَلَّ کی عبادت کیا کرتا تھا۔ ایک مرتبہ اسے خبر ملی کہ قریبی شہر میں ایک ظالم وجابر بادشاہ لوگوں پر بہت ظلم کرتا ہے ،بِلا وجہ ان کے ہاتھ پاؤں اور ناک ،کان کاٹ ڈالتا ہے ۔چنانچہ، وہ عابد اس ظالم حکمران کے پاس گیا اور بڑے ہی جرأت مندانہ انداز میں کہا :اے بادشاہ ! اللہ عَزَّوَجَلَّ سے ڈر! یہ سن کر بد بخت و ظالم بادشاہ غضب ناک ہوگیا اور بڑے گستاخانہ انداز میں بولا : اے کتے ! تیرے جیسا حقیر شخص مجھے اللہ عَزَّوَجَلَّ سے ڈرنے کا حکم دے رہا ہے، میں تجھے اس گستا خی کی ایسی سزادوں گا کہ آج تک دنیا میں ایسی سزا کسی کو نہ دی گئی ہوگی ۔ پھر اس ظالم بادشاہ نے حکم دیا کہ قدموں سے سر تک اس کی کھال اتا ر لوتا کہ یہ تڑ پ تڑپ کر مرے ! حکم پاتے ہی جلا د آگے بڑھے عابدکو زمین پر لٹایا اور قدموں سے کھال اتارنا شرو ع کردی۔ وہ صبر و شکر کا پیکر بنا رہا ،زبان سے اُف تک نہ کہا۔ جب پیٹ تک کھال اُتارلی گئی تو درد کی شدت سے اس کے منہ سے درد بھری آہ نکلی۔ فوراً حکم الٰہی پہنچا:اے عُقَیْب! صبر سے کام لے، ہم تجھے غَم وحُزْن(دکھ درد) کے گھر(دُنیا) سے نکال کر راحت وآرام کے گھر (یعنی جنت )میں داخل کریں گے اور اس تنگ وتاریک دنیا سے نکال کر وسیع وعریض جنت میں داخل کریں گے، حکم الٰہی پاکر وہ عظیم ولی بالکل خاموش ہوگیا ۔
    جب ظالموں نے چہرے تک کھال اتارلی تو شدتِ درد سے دوبارہ بے اختیار درد بھر ی آہ نکلی، پھر حکم الٰہی ہوا، اے عُقَیْب! تیری اس مصیبت پر دنیا اور آسمان کی مخلوق رور ہی ہے ، فرشتے تیری طرف متوجہ ہوگئے ہیں ، اگر تو نے تیسری مرتبہ بھی ایسی ہی پُر درد آہ بھری تو میں اس ظالم قوم کو شدید عذاب کا مزا چکھاؤں گا۔ اب وہ عابد بالکل خاموش ہو گیا کہ کہیں میری آہ وزاری سے میری قوم کو عذاب میں مبتلا نہ کردیا جائے، بالآخر اس صبر وشکر کے پیکر کی تمام کھال اتارلی گئی اوراس نے اپنی جان جانِ آفریں کے سپرد کر دی۔
    (عیون الحکایات ، ص۱۰۱)
    اللہ عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رحمت ہو اور اُن کے صَدْقے ہماری بے حساب مغفرت ہو۔
    اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

    تِری سنتوں پہ چل کر مری روح جب نکل کر چلے تم گلے لگانا مدنی مدینے والے
    تِرے نام پہ ہو قرباں میری جان، جانِ جاناں ہو نصیب سر کٹانا مدنی مدینے والے
     
  2. *Ameer*
    Offline

    *Ameer* Regular Member
    • 36/49

    واہ کیاکمال کی شیرنگ کی ہے
    جزاک اللہ
    آپکی طرف سے مزید اچھی اچھی
    شیرنگ کا انتظار رہےگا​
     

Share This Page