1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

زندان نامہ کی ایک شام

Discussion in 'Poetry' started by *Shan Jee*, Oct 27, 2015.

  1. *Shan Jee*

    *Shan Jee* Designer

    زندان نامہ کی ایک شام

    شام کے پیچ و خم ستاروں سے

    زینہ زینہ اُتر رہی ہے رات

    یوں صبا پاس سے گزرتی ہے

    جیسے کہہ دی کسی نے پیار کی بات

    صحنِ زنداں کے بے وطن اشجار

    سرنگوں ، محو ہیں بنانے میں

    دامنِ آسماں پہ نقش و نگار

    شانہ بام پر دمکتا ہے

    مہرباں چاندنی کا دست جمیل

    خاک میں گُھل گئی ہے آب نجوم

    نُور میں گُھل گئی ہے عرش کا نیل

    سبز گوشوں میں نیلگوں سائے

    لہلہاتے ہیں جس طرح دل میں

    موجِ دردِ فراقِ یار آئے

    دل سے پیہم خیال کہتا ہے

    اتنی شیریں ہے زندگی اس پل

    ظلم کا زہر گھولنے والے

    کامراں ہوسکیں گے آج نہ کل

    جلوہ گاہِ وصال کی شمعیں

    وہ بجھا بھی چکے اگر تو کیا

    چاند کو گُل کریں تو ہم جانیں
     
  2. PakArt

    PakArt May Allah bless all Martyre of Pakistan Staff Member

    Hello guest, Thank you for Register or you log to see the links!


    برائے مہربانی فورم اوپر والے فورم پالیسی آیئکون کو
    کلک کیجئے وضع کردہ پالیسی کو پڑھیئے تاکہ کل کو ئی غلط فہمی کا اِمکان نہ رہے۔شکریہ

    [​IMG]
     

Share This Page