1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔
  2. آئی ٹی استاد کے لیے ٹیم ممبرز کی ضرورت ہے خواہش مند ممبرز ایڈمن سے رابطہ کریں
    Dismiss Notice
  3. Dismiss Notice

ﺭﺳﻢ رواج ﮐﯿﺴﮯ ﺟﻨﻢ لیتے ﮨیں؟؟


آئی ٹی استاد کی ںئی ایپ ڈاونلوڈ کریں اور آئی ٹی استاد ٹیلی نار اور ذونگ نیٹ ورک پر فری استمال کریں

itustad

Discussion in 'حالاتِ حاضرہ' started by Admin, Nov 7, 2016.

حالاتِ حاضرہ"/>Nov 7, 2016"/>
?

کیا رسم و رواج ایسے ہی جنم لیتے ہیں اپنی رائے دیں ؟

  1. جی ہاں

    4 vote(s)
    100.0%
  2. جی نہیں

    0 vote(s)
    0.0%
  3. پتہ نہیں

    0 vote(s)
    0.0%

Share This Page

  1. Admin
    Offline

    Admin Lover Staff Member
    • 63/65

    ﺭﺳﻢ رواج ﮐﯿﺴﮯ ﺟﻨﻢ لیتے ﮨیں؟؟

    ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﮔﺮﻭﮦ ﻧﮯ 5 ﺑﻨﺪﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﭘِﻨﺠﺮﮮﻣﯿﮟ ﺑﻨﺪ ﮐﯿﺎ۔۔ﺍﺱ ﭘِﻨﺠﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﮯ ﺍﻭﭘﺮﮐﭽﮫ ﮐﯿﻠﮯ ﺑﮭﯽ ﺭﮐﮭﮯ۔

    ﺗﺠﺮﺑﮧ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺍ۔

    ﺟﺐ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﻨﺪﺭ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﭘﺮ ﭼﮍﮬﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﻮ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﮞ ﻧﯿﭽﮯ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﻨﺪﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﭨﮭﻨﮉﺍ ﭘﺎﻧﯽ ﺑﺮﺳﺎﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﮯ۔ جب ہر بار ایسا ہوا تو اب جیسے ہی ﮐﻮﺋﯽ ﺑﻨﺪﺭ ﮐﯿﻠﻮﮞ ﮐﯽ ﻻﻟﭻ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﭘﺮ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺗﺎ، ﻧﯿﭽﮯ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﻨﺪﺭ ﺍﺳﮑﻮ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﭘﺮ ﭼﮍﮬﻨﮯ ﻧﮧ ﺩﯾﺘﮯ اور خوب مارتے۔ ﮐﭽﮫ ﺩﯾﺮ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﯿﻠﻮﮞ ﮐﮯ ﻻﻟﭻ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺑﻨﺪﺭ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﭘﺮ ﭼﮍﮬﻨﮯ ﮐﯽ ﮨﻤﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﭘﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ - ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﻨﺪﺭ ﮐﻮ ﺑﺪﻝ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ -

    ﭘﮩﻠﯽ ﭼﯿﺰ ﺟﻮ ﻧﺌﮯ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺑﻨﺪﺭ ﻧﮯ ﮐﯽ ﻭﮦ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﭘﺮ ﭼﮍﮬﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﻓﻮﺭﺍ ﮨﯽ ﺍﺳﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺑﻨﺪﺭﻭﮞ ﻧﮯ ﻣﺎﺭﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ -ﮐﺌﯽ ﺩﻓﻌﮧ ﭘﭩﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻧﺌﮯ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺑﻨﺪﺭ ﻧﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻃﮯ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺳﯿﮍﮬﯽ ﭘﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﮍﮬﮯ ﮔﺎ حالانکہ ﺍﺳﮯﻣﻌﻠﻮﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﮐﯿﻮﮞ؟

    ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﺑﻨﺪﺭ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﺎ ﺑﮭﯽ ﯾﮩﯽ ﺣﺸﺮ ﮨﻮﺍ - ﺍﻭﺭ ﻣﺰﮮ ﮐﮧ ﺑﺎﺕ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺑﻨﺪﺭ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﮯ ﻣﺎﺭﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﺗﮭﺎ -

    ﺍﺳﮑﮯ ﺑﻌﺪ ﺗﯿﺴﺮﮮ ﺑﻨﺪﺭ ﮐﻮ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﺎ ﺑﮭﯽﯾﮩﯽ ﺣﺸﺮ ( ﭘﭩﺎﺋﯽ ) ﮨﻮﺍ -

    ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﺳﺎﺭﮮ ﭘﺮﺍﻧﮯ ﺑﻨﺪﺭ ﻧﺌﮯ ﺑﻨﺪﺭ ﺳﮯ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﺐ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﯾﮩﯽ ﺳﻠﻮﮎ ﮨﻮﺗﺎ ﺭﮨﺎ -

    ﺍﺏ ﭘِﻨﺠﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺻﺮﻑ ﻧﺌﮯ ﺑﻨﺪﺭ ﺭﮦ ﮔﺌﮯ ﺟﺲ ﭘﺮ ﮐﺒﮭﯽﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﺎﺭﺵ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺮﺳﺎﺋﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﻭﮦﺳﯿﮍﮬﯽ ﭘﺮ ﭼﮍﮬﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺑﻨﺪﺭ ﮐﯽ ﭘﭩﺎﺋﯽ ﮐﺮﺗﮯ - ﺍﮔﺮ ﯾﮧ ﻣﻤﮑﻦ ﮨﻮﺗﺎ ﮐﮧ ﺑﻨﺪﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮐﮧ ﺗﻢ ﮐﯿﻮﮞﺳﯿﮍﮬﯽ ﭘﺮ ﭼﮍﮬﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺑﻨﺪﺭ ﮐﻮ ﻣﺎﺭﺗﮯ ﮨﻮ ﯾﻘﯿﻨﺎً ﻭﮦ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ ﮐﮧ ﮨﻤﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻌﻠﻮﻡ؟ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺗﻮ ﺳﺐ ﮐﻮ ﺍﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﮐﺮﺗﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ۔۔۔۔

    ﺍﺣﺒﺎﺏ۔۔ !

    ﺳﻮﭼﻨﺎ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺑﮭﯽ ﮐﮩﯿﮟ ﺍﯾﺴﺎ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ۔ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺩﯾﮑﮭﯽ ﺭﺳﻢ ﻭ ﺭﻭﺍﺝ ﭘﺮﻭﺍﻥ ﭼﮍﮬﺘﮯ ﮨﯿﮟ،ﺍﻣﯿﺪ ﮨﮯ ﺁﭖ ﺍﺱ ﭘﻮﺷﯿﺪﮦ ﭘﯿﻐﺎﻡ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮫ ﮔﺌﮯ ﮨﻮﻧﮕﮯ۔،۔،ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﮐﻮ ﺿﺮﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮭﺎﺋﻴﮯ ﺗﺎﮐﮧ ﻭﮦ ﺑﮭﯽﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﺳﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯿﻮﮞ ﺍﯾﺴﮯﮔﺰﺍﺭ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﯿﺴﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮔﺰﺭ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔۔ ﺍﮨﻞ ﻋﻘﻞ ﻭ ﺩﺍﻧﺶ ﮐﺒﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﺪﮬﯽ ﺗﻘﻠﯿﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﮯ،ﺑﻠﮑﮧ ﮨﺮ ﺑﺎﺕ ﮐﻮ ﺳﻮﭺ ﺳﻤﺠﮫ ﮐﺮ ﺍﻭﺭ ﻣﮑﻤﻞ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯﺑﻌﺪ ﺍﭘﻨﮯ ﻟﺌﮯ ﺭﺍﮦ ﻋﻤﻞ ﻣﺘﻌﯿﻦ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔
     
    IQBAL HASSAN likes this.
  2. IronMan
    Offline

    IronMan My Name is Zain Khan from Islambad Staff Member
    • 28/33

    buhat sabaq amaiz tehreer hey,yeh sehi hum bhi wuhi kurtey hain jo doorey kurtey hain,naqal marney main banda chahey zidgi main fail hi kiyoun ho jie
    Lekun hum zaroor naqal kurain gay chaye kuch naqal ki huwi rasmoun say maqrooz hi kiyoun na hi jieyn.​
     
  3. Admin
    Offline

    Admin Lover Staff Member
    • 63/65

    Thanks Ironman
     
  4. IQBAL HASSAN
    Offline

    IQBAL HASSAN Designer
    • 63/65


    دنیا میں انسانوں کے درمیان صحیح تبلیغ نہ ہونے کی وجہ سے ہی غلط رسم و رواج اور عقیدے جنم لیتے ہیں ،اور ایسی ایسی مضحکہ خیز باتیں وجود میں آتی ہیں جن کا مذہب اور عقل و منطق سے دور کا بھی واسطہ نہیں ہوتااور یہ باتیں اکثرتوحید کے منافی یا اس سے متصادم ہوتی ہیں
     

Share This Page