1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

ہر قدم گریزاں تھا

Discussion in 'Amjad Islam Amjad' started by Ziaullah mangal, Dec 9, 2015.

  1. Ziaullah mangal

    Ziaullah mangal Well Wishir

    ہر قدم گریزاں تھا

    ہر قدم گریزاں تھا? ہر نظر میں وحشت تھی
    مصلحت پرستوں کی رہبری قیامت تھی

    منزل تمنا تک کون ساتھ دیتا ہے
    گردِ سعِی لا حاصل ہر سفر کی قسمت تھی

    آپ ہی بگڑتا تھا? آپ من بھی جاتا تھا
    اس گریز پہلو کی یہ عجیب عادت تھی

    اُس نے حال پوچھا تو یاد ہی نہ آتا تھا
    کِس کو کِس سے شکوہ تھا? کس سے کیا شکایت تھی

    دشت میں ہواﺅں کی بے رُخی نے مارا ہے
    شہر میں زمانے کی پوچھ گچھ سے وحشت تھی

    یوں تو دن دہاڑے بھی لوگ لُوٹ لیتے ہیں
    لیکن اُن نگاہوں کی اور ہی سیاست تھی

    ہجر کا زمانہ بھی کیا غضب زمانہ تھا
    آنکھ میں سمندر تھا? دھیان میں وہ صورت تھی​

     
  2. IQBAL HASSAN

    IQBAL HASSAN Management



    واہ ۔کیا بات ھے ۔
    بہت اچھا لگا اپ کا تھریڈ پڑھ کر
    اپ کابے حد شکریہ
     

Share This Page