1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

جو رکے تو کوہِ گراں تھے ہم

Discussion in 'Faiz Ahmed Faiz' started by nizamuddin, Jan 19, 2016.

  1. nizamuddin

    nizamuddin Regular Member

    نہ گنواؤ ناوکِ نیم کش دلِ ریزہ ریزہ گنوادیا
    جو بچے ہیں سنگ سمیٹ لو، تنِ داغ داغ لٹا دیا
    مرے چارہ گر کو نوید ہو، صفِ دشمناں کو خبر کرو
    جو وہ قرض رکھتے تھے جان پر، وہ حساب آج چکادیا
    کرو کج جبیں پہ سرِ کفن مرے قاتلوں کو گماں نہ ہو
    کہ غرورِ عشق کا بانکپن پسِ مرگ ہم نے بھلا دیا
    اُدھر ایک حرف کہ کشتنی، یہاں لاکھ عذر تھا گفتنی
    جو کہا تو سن کے اڑا دیا، جو لکھا تو پڑھ کے مٹا دیا
    جو رکے تو کوہِ گراں تھے ہم ، جو چلے تو جاں سے گزر گئے
    رہِ یار ہم نے قدم قدم تجھے یادگار بنادیا
    (فیض احمد فیض)

    [​IMG]
     
    IQBAL HASSAN likes this.
  2. بھت خوب شاندار
     
  3. Aqibimtiaz786

    Aqibimtiaz786 mr.anjaan

    Bht Khoooob Share Krne Ka Shukriya.........
     
  4. Aqibimtiaz786

    Aqibimtiaz786 mr.anjaan

    Bht Khoooob Share Krne Ka Shukriya.........
     
  5. IQBAL HASSAN

    IQBAL HASSAN Management

    [​IMG]
    ...........................

    بہت ھی عمدہ شیرینگ ھے ۔
    اپ کابہت شکریہ۔ نوازش ۔

    ...........................
    [​IMG]
     

Share This Page