1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔
  2. آئی ٹی استاد کے لیے ٹیم ممبرز کی ضرورت ہے خواہش مند ممبرز ایڈمن سے رابطہ کریں
    Dismiss Notice
  3. Dismiss Notice

حضرت لوط علیہ السلام


آئی ٹی استاد کی ںئی ایپ ڈاونلوڈ کریں اور آئی ٹی استاد ٹیلی نار اور ذونگ نیٹ ورک پر فری استمال کریں

itustad

Discussion in 'History aur Waqiat' started by Ahsaaan, Jan 19, 2016.

History aur Waqiat"/>Jan 19, 2016"/>

Share This Page

  1. Ahsaaan
    Offline

    Ahsaaan Lover
    • 48/49


    ﺣﻀﺮﺕ ﺍﺑﺮﺍﮨﯿﻢ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ
    ﮐﮯ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﺴﺘﯽ
    ﺳﺪﻭﻡ ﻧﺎﻣﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻧﮯ
    ﺣﻀﺮﺕ ﻟﻮﻁ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﻮ
    ﺍﭘﻨﺎ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ ﺍﻭﺭ ﻧﺒﯽ ﺑﻨﺎ ﮐﺮ
    ﺑﮭﯿﺠﺎ۔ ﺣﻀﺮﺕ ﻟﻮﻁ ﻋﻠﯿﮧ
    ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ
    ﻣﺤﺒﻮﺏ ﻣﺸﻐﻠﮧ ﭼﻮﺭﯼ ﮈﺍﮐﮧ ﺗﮭﺎ۔
    ﺣﻀﺮﺕ ﻟﻮﻁ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﻧﮯ
    ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﻮ ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ ﺳﻤﺠﮭﺎﯾﺎ
    ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺣﻀﺮﺕ ﻟﻮﻁ ﻋﻠﯿﮧ
    ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﯽ ﻭﻋﻆ ﻭ ﻧﺼﯿﺤﺖ ﮐﺎ
    ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺛﺮ ﻧﮧ ﮨﻮﺍ، ﺑﻠﮑﮧ ﻭﮦ ﺍﻟﭩﮯ
    ﺍﻥ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﮨﻮﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﺒﻮﺭ
    ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺍﯾﺴﮯ ﮨﯽ
    ﻧﯿﮏ ﭘﺎﮎ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺍﺱ ﺑﺴﺘﯽ ﺳﮯ
    ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺋﻮ۔ﺣﻀﺮﺕ ﻟﻮﻁ ﻋﻠﯿﮧ
    ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻡ ﺳﮯ
    ﮐﮩﺎ، ﻣﯿﮟ ﮈﺭﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﺗﻢ ﭘﺮ
    ﺧﺪﺍ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻋﺬﺍﺏ ﻧﮧ ﺁﺟﺎﺋﮯ۔
    ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﯾﮩﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻥ
    ﺑﺮﮮ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﺎﺯ ﺁﺟﺎﺋﻮ ﺍﻭﺭ
    ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﻧﯿﮏ ﺑﻨﺪﮮ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﻮ
    ﺗﺎﮐﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻋﺎﻗﺒﺖ ﮐﻮ
    ﺳﻨﻮﺍﺭ ﺳﮑﻮ ﺍﻭﺭ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﺮﻭ،
    ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﻃﺮﻑ
    ﺍﭘﻨﺎ ﺭﺳﻮﻝ ﺑﻨﺎ ﮐﺮ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﮨﮯ۔
    ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻌﺎﻭﺿﮧ ﺍﻭﺭ
    ﺍﺟﺮ ﺗﻮ ﻃﻠﺐ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺍ، ﻣﯿﺮﺍ
    ﺍﺟﺮ ﺗﻮ ﻣﯿﺮﮮ ﺭﺏ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮨﮯ،
    ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺣﻀﺮﺕ ﻟﻮﻁ ﻋﻠﯿﮧ
    ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﯽ ﻭﻋﻆ ﻭ ﻧﺼﯿﺤﺖ ﮐﺎ
    ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺛﺮ ﻧﮧ ﮨﻮﺍ، ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻟﭩﺎ ﺍﻥ ﮐﻮ
    ﺗﻨﮓ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺟﺲ
    ﻋﺬﺍﺏ ﺳﮯ ﺗﻮ ﺭﻭﺯ ﮨﻤﯿﮟ ﮈﺭﺍﺗﺎ
    ﮨﮯ ﺍﮔﺮ ﺗﻮ ﺳﭽﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ
    ﺍﺱ ﻋﺬﺍﺏ ﮐﻮ ﮨﻢ ﭘﺮ ﻟﮯ ﺁ۔
    ﺁﺧﺮ ﺧﺪﺍ ﮐﺎ ﻏﻀﺐ ﺟﻮﺵ ﻣﯿﮟ
    ﺁﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻧﮯ ﺍﺱ
    ﺑﺴﺘﯽ ﮐﻮ ﻓﻨﺎ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﭘﺨﺘﮧ
    ﺗﮩﯿﮧ ﮐﺮﻟﯿﺎ، ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻧﮯ ﻋﺬﺍﺏ
    ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻓﺮﺷﺘﮯ ﺑﮭﯿﺠﮯ، ﯾﮧ
    ﻓﺮﺷﺘﮯ ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺣﻀﺮﺕ
    ﺍﺑﺮﺍﮨﯿﻢ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ
    ﺁﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺣﻀﺮﺕ ﺍﺳﺤﺎﻕ
    ﮐﯽ ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ ﮐﯽ ﺧﻮﺷﺨﺒﺮﯼ
    ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ
    ﮐﮧ ﮨﻢ ﻓﺮﺷﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻓﻼﮞ
    ﺑﺴﺘﯽ ﭘﺮ ﻋﺬﺍﺏ ﻻﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ
    ﺑﮭﯿﺠﮯ ﮔﺌﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺣﻀﺮﺕ
    ﺍﺑﺮﺍﮨﯿﻢ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﭼﻮﮞ ﮐﮧ
    ﻧﯿﮏ ﺑﻨﺪﮮ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ
    ﺑﮭﻼﺋﯽ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﻭﮦ
    ﻓﺮﺷﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﺟﮭﮕﮍﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﮐﮧ
    ﺍﯾﺴﺎ ﻧﮧ ﮐﺮﻭ، ﺍﺱ ﺑﺴﺘﯽ ﻣﯿﮟ
    ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﻧﺒﯽ ﻟﻮﻁ ﺑﮭﯽ ﺭﮨﺘﺎ
    ﮨﮯ،ﻓﺮﺷﺘﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺳﻮﺍﺋﮯ
    ﻟﻮﻁ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ
    ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﭽﺎﻟﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ
    ﺻﺒﺢ ﺗﮏ ﺍﺱ ﺑﺴﺘﯽ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻥ
    ﺗﮏ ﻧﮧ ﮨﻮﮔﺎ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻓﺮﺷﺘﮯ
    ﺍﻧﺴﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﻣﯿﮟ ﺣﻀﺮﺕ
    ﻟﻮﻁ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﮯ ﻣﮑﺎﻥ ﭘﺮ
    ﺁﺋﮯ،ﻓﺮﺷﺘﻮﮞ ﻧﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﻟﻮﻁ
    ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺍﻟﻠﮧ
    ﮐﮯ ﺑﮭﯿﺠﺌﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻓﺮﺷﺘﮯ ﯾﮩﮟ،
    ﺗﻢ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻧﺪﯾﺸﮧ ﻧﮧ ﮐﺮﻭ، ﺻﺒﺢ
    ﺗﮏ ﺍﺱ ﺑﺴﺘﯽ ﮐﺎ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﺗﺨﺘﮯ
    ﭘﺮ ﻧﺎﻡ ﻭ ﻧﺸﺎﻥ ﺗﮏ ﺑﺎﻗﯽ ﻧﮧ
    ﮨﻮﮔﺎ، ﺗﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﻟﮯ
    ﮐﺮ ﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﮑﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ
    ﺑﺴﺘﯽ ﺳﮯ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺋﻮ، ﻟﯿﮑﻦ
    ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺑﯿﻮﯼ ﺍﺱ ﻋﺬﺍﺏ ﺳﮯ
    ﻧﮩﯿﮟ ﺑﭻ ﺳﮑﺘﯽ، ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺭﺍﺕ
    ﮐﮯ ﺁﺧﺮﯼ ﺣﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﺣﻀﺮﺕ
    ﻟﻮﻁ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮ
    ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺍﺱ ﺑﺴﺘﯽ ﺳﮯ
    ﻧﮑﻞ ﮔﺌﮯ۔
    ﺍﮔﻠﮯ ﺩﻥ ﯾﮧ ﺑﺴﺘﯽ ﮐﮭﻨﮉﺭﺍﺕ ﮐﺎ
    ﺍﯾﮏ ﮈﮬﯿﺮ ﺗﮭﯽ، ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻧﮯ
    ﺍﺱ ﻗﻮﻡ ﭘﺮ ﭘﺘﮭﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺑﺎﺭﺵ
    ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﺯﻣﯿﻦ ﮐﻮ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺍﻟﭧ ﺩﯾﺎ
    ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺣﻀﺮﺕ ﻟﻮﻁ
    ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﯽ ﻗﻮﻡ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ
    ﻋﺬﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﺁﺧﺮ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ
    ﺩﻧﯿﺎ ﺳﮯ ﻧﺎﺑﻮﺩ ﮨﻮﮔﺌﯽ۔

     
  2. IQBAL HASSAN
    Offline

    IQBAL HASSAN Designer
    • 63/65

    [​IMG]

    ماشا اللہ ۔۔۔۔
    ۔بہت اچھی تحریر ہے اللہ آپ کو خوش ر کھئے
    آمین ثمہ امین۔۔۔

    [​IMG]
     
  3. usama
    Offline

    usama Newbi
    • 16/8

    jazakAllah....
     

Share This Page