1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔
  2. آئی ٹی استاد کے لیے ٹیم ممبرز کی ضرورت ہے خواہش مند ممبرز ایڈمن سے رابطہ کریں
    Dismiss Notice
  3. Dismiss Notice

حضرت شعیب علیہ السلام


آئی ٹی استاد کی ںئی ایپ ڈاونلوڈ کریں اور آئی ٹی استاد ٹیلی نار اور ذونگ نیٹ ورک پر فری استمال کریں

itustad

Discussion in 'History aur Waqiat' started by Ahsaaan, Jan 19, 2016.

History aur Waqiat"/>Jan 19, 2016"/>

Share This Page

  1. Ahsaaan
    Offline

    Ahsaaan Lover
    • 48/49


    ﺟﺐ ﺣﻀﺮﺕ ﯾﻮﺳﻒ ﻋﻠﯿﮧ
    ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺍﻭﺭ ﺑﮭﺎﺋﯽ
    ﻣﺼﺮ ﻣﯿﮟ ﺁﮔﺌﮯ ﺗﻮ ﻋﺰﯾﺰ ﻣﺼﺮ
    ﻧﮯ ﮐﮩﺎ، ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮨﮯ، ﺟﮩﺎﮞ
    ﭼﺎﮨﻮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺁﺑﺎﺩ ﮐﺮﻭ، ﺣﻀﺮﺕ
    ﯾﻮﺳﻒ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﻧﮯ ﯾﮩﯽ
    ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺳﻤﺠﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺷﮩﺮ
    ﻣﯿﮟ ﺁﺑﺎﺩ ﻧﮧ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ، ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮧ
    ﺷﮩﺮﯼ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﺍﮐﺜﺮ ﺍﭼﮭﺎ ﻧﮩﯿﮟ
    ﮨﻮﺗﺎ، ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺁﭖ ﻧﮯ ﻋﺰﯾﺰ ﻣﺼﺮ
    ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺩﯾﮩﺎﺕ ﮐﮯ
    ﺭﮨﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﯾﮧ
    ﺷﮩﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺵ ﻧﮧ ﺭﮦ
    ﺳﮑﯿﮟ ﮔﮯ، ﺍﻥ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﯾﮩﯽ
    ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﯽ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﮨﻮﮔﯽ۔
    ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﮭﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﻮ
    ﺍﯾﮏ ﺳﺮ ﺳﺒﺰ ﻋﻼﻗﮯ ﻣﯿﮟ ﺁﺑﺎﺩ
    ﮐﺮﺩﯾﺎ، ﺍﻧﮩﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺣﻀﺮﺕ
    ﺷﻌﯿﺐ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ
    ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺗﺸﺮﯾﻒ
    ﻻﺋﮯ۔
    ﺟﺐ ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ ﻋﻠﯿﮧ
    ﺍﻟﺴﻼﻡ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻻﺋﮯ
    ﺗﻮ ﭼﻨﺪ ﺍﯾﮏ ﻟﻮﮒ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ
    ﺳﺎﺭﯼ ﮐﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﻗﻮﻡ ﮔﻨﺎﮨﻮﮞ
    ﺍﻭﺭ ﺑﺪﺍﻋﻤﺎﻟﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮﯼ
    ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺍﯾﮏ ﺧﺪﺍ ﮐﻮ
    ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺑﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﭘﻮﺟﺎ ﮐﯿﺎ
    ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺧﺮﯾﺪ ﻭ ﻓﺮﻭﺧﺖ
    ﻣﯿﮟ ﭘﻮﺭﺍ ﻟﯿﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﻢ ﺗﻮﻟﻨﺎ ﺍﻥ
    ﮐﺎ ﻋﺎﻡ ﭘﯿﺸﮧ ﺗﮭﺎ۔ ﭼﻮﺭﯾﺎﮞ ﮐﺮﺗﮯ
    ﺍﻭﺭ ﮈﺍﮐﮯ ﮈﺍﻟﺘﮯ۔ ﺍﺱ ﭼﯿﺰ ﻧﮯ
    ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻣﻐﺮﻭﺭ ﺍﻭﺭ ﻣﺘﮑﺒﺮ ﺑﻨﺎﺭﮐﮭﺎ
    ﺗﮭﺎ۔
    ﺁﭖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﻮ ﻣﺨﺎﻃﺐ
    ﮐﺮﮐﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺧﺪﺍﺋﮯ ﻭﺍﺣﺪ
    ﮐﯽ ﭘﺮﺳﺘﺶ ﮐﺮﻭ، ﺍﺱ ﮐﮯ
    ﻋﻼﻭﮦ ﮐﻮﺋﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﮯ ﻻﺋﻖ
    ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺧﺮﯾﺪ ﻭ ﻓﺮﻭﺧﺖ ﻣﯿﮟ
    ﻧﺎﭖ ﺗﻮﻝ ﮐﻮﺭ ﭘﻮﺭﺍ ﺭﮐﮭﻮ ﺍﻭﺭ
    ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻌﺎﻣﻼﺕ ﮐﺮﺗﮯ
    ﻭﻗﺖ ﮐﮭﻮﭦ ﻧﮧ ﻣﻼﯾﺎ ﮐﺮﻭ۔
    ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻢ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻥ
    ﺑﺪﺍﻋﻤﺎﻟﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﺘﺎﺋﺞ ﺳﮯ ﺁﮔﺎﮦ
    ﻧﮧ ﮨﻮ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺏ ﺟﺐ ﮐﮧ ﺧﺪﺍ ﮐﺎ
    ﻧﺒﯽ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﭘﺎﺱ ﺁﭼﮑﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ
    ﺍﺏ ﺗﻢ ﯾﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﮧ ﺳﮑﺘﮯ ﮐﮧ
    ﮨﻢ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺑﺮﮮ
    ﺍﻋﻤﺎﻝ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﻭﮐﺎ ﺗﮭﺎ۔
    ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ
    ﺑﮍﮮ ﻓﺼﯿﺢ ﻭ ﺑﻠﯿﻎ ﻣﻘﺮﺭ ﺗﮭﮯ۔
    ﺁﭖ ﻧﮯ ﮨﺮ ﻃﺮﯾﻖ ﺳﮯ ﻗﻮﻡ ﮐﻮ
    ﺳﻤﺠﮭﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ۔
    ﻣﺤﺒﺖ ﺳﮯ ﺭﺍﮦ ﺭﺍﺳﺖ ﭘﺮ ﻻﻧﮯ
    ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ۔ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﻋﺬﺍﺏ
    ﺳﮯ ﮈﺭﺍﯾﺎ، ﻣﮕﺮ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﭘﺮ
    ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺛﺮ ﻧﮧ ﮨﻮﺍ، ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ
    ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ
    ﮐﯽ ﻣﺨﺎﻟﻔﺖ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯼ۔ ﭼﻨﺪ
    ﺍﯾﮏ ﻏﺮﯾﺐ ﺍﻭﺭ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﻟﻮﮒ ﺟﻮ
    ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﭘﺮ
    ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻟﮯ ﺁﺋﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﻥ ﺳﺮﮐﺸﻮﮞ
    ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺳﺘﺎﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯾﺎ۔
    ﺭﺍﺳﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮫ ﮐﺮ ﺍﻥ ﻟﻮ
    ﻟﻮﭦ ﻟﯿﺘﮯ، ﺯﺩﻭﮐﻮﺏ ﮐﺮﺗﮯ ﺍﻭﺭ
    ﺩﮬﻤﮑﺎﺗﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ
    ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ
    ﺧﺪﺍ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺟﻮ ﭘﯿﻐﺎﻡ
    ﻟﮯ ﮐﺮ ﺁﺋﮯ ﺗﮭﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺳﻨﺎﺗﮯ
    ﺭﮨﮯ۔
    ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﺱ ﻗﻮﻡ ﮐﮯ ﺳﺮﺩﺍﺭ
    ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﮯ
    ﭘﺎﺱ ﺁﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺩﮬﻤﮑﯽ
    ﺩﯼ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺱ ﻭﻋﻆ ﻭ
    ﻧﺼﯿﺤﺖ ﺳﮯ ﺑﺎﺯ ﻧﮧ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﮨﻢ
    ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﮐﮧ ﺁﭖ ﮐﻮ ﯾﮩﺎﮞ
    ﺳﮯ ﻧﮑﺎﻝ ﺩﯾﮟ۔ ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ
    ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ، ﻣﯿﮟ
    ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﻮﮞ، ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﮨﯽ
    ﺑﮭﻼﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﮩﺘﺮﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﮩﺘﺎ
    ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻧﺪﯾﺸﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ
    ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﺍ ﮐﮩﻨﺎ ﻧﮧ ﻣﺎﻧﺎ ﺗﻮ
    ﺗﻢ ﭘﺮ ﺧﺪﺍ ﮐﺎ ﻋﺬﺍﺏ ﻧﮧ ﻧﺎﺯﻝ
    ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ۔
    ﺁﺧﺮ ﺟﺐ ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﻧﺎﻓﺮﻣﺎﻧﯽ ﺣﺪ
    ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ
    ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﮯ
    ﺧﺪﺍﺋﯽ ﭘﯿﻐﺎﻡ ﮐﻮ ﭨﮭﮑﺮﺍﺩﯾﺎ ﺗﻮ
    ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﺎ ﻭﻋﺪﮦ ﭘﻮﺭﺍ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ
    ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ
    ﮐﯽ ﻗﻮﻡ ﭘﺮ ﺧﺪﺍ ﮐﺎ ﻋﺬﺍﺏ ﻧﺎﺯﻝ
    ﮨﻮﮔﯿﺎ، ﯾﮧ ﻋﺬﺍﺏ ﺩﻭ ﻗﺴﻢ ﮐﺎ ﺗﮭﺎ
    ﺍﯾﮏ ﺧﻮﻑ ﻧﺎﮎ ﮐﮍﮎ ﻧﮯ ﺯﻣﯿﻦ
    ﮐﻮ ﮨﻼﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺯﻟﺰﻟﮯ ﻧﮯ ﺗﻤﺎﻡ
    ﻋﻤﺎﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﺴﻤﺎﺭ ﮐﺮﺩﯾﺎ، ﺍﺑﮭﯽ
    ﯾﮧ ﺯﻟﺰﻟﮯ ﮐﯽ ﺗﺒﺎﮦ ﮐﺎﺭﯾﺎﮞ ﺟﺎﺭﯼ
    ﺗﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﺳﮯ ﺁﮒ ﺑﺮﺳﻨﮯ
    ﻟﮕﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﯾﮧ
    ﻭﺳﯿﻊ ﻗﻄﻌﮧ ﺯﻣﯿﻦ ﺟﮭﻠﺴﯽ
    ﮨﻮﺋﯽ ﻻﺷﻮﮞ ﮐﺎ ﻗﺒﺮﺳﺘﺎﻥ ﺑﻦ
    ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺳﺮﺯﻣﯿﻦ ﺍﯾﺴﯽ
    ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﯾﮩﺎﮞ
    ﮐﻮﺋﯽ ﺁﺑﺎﺩ ﮨﯽ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ۔ ﺻﺮﻑ
    ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ
    ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭼﻨﺪ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﺗﮭﯽ
    ﺍﺱ ﻋﺬﺍﺏ ﺳﮯ ﺑﭽﮯ، ﺟﻨﮩﻮﮞ ﻧﮯ
    ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﻋﺬﺍﺏ ﺳﮯ ﭘﻨﺎﮦ
    ﻣﺎﻧﮕﯽ ﺗﮭﯽ۔
    ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﺪﯾﻦ ﮐﯽ ﺗﺒﺎﮨﯽ ﻭ
    ﺑﺮﺑﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ
    ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﺣﻀﺮ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ
    ﺷﮩﺮ ﺳﯿﻠﻮﻥ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﺁﮐﺮ
    ﭨﮭﮩﺮﮮ ﺍﻭﺭ ﻭﮨﯿﮟ ﺁﭖ ﻧﮯ ﻭﻓﺎﺕ
    ﭘﺎﺋﯽ

     
  2. muzafar ali
    Offline

    muzafar ali Regular Member
    • 28/33

    Masha Allah
     
  3. IQBAL HASSAN
    Offline

    IQBAL HASSAN Designer
    • 63/65

    [​IMG]

    ماشا اللہ ۔۔۔۔
    ۔بہت اچھی تحریر ہے اللہ آپ کو خوش ر کھئے
    آمین ثمہ امین۔۔۔

    [​IMG]
     

Share This Page