1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

یونہی بے سبب نہ پھرا کرو، کوئی شام گھر بھی ر&#

Discussion in 'Design Poetry sharing by normal member' started by nizamuddin, Feb 2, 2016.

  1. nizamuddin

    nizamuddin Regular Member

    یونہی بے سبب نہ پھرا کرو، کوئی شام گھر بھی رہا کرو

    وہ غزل کی سچی کتاب ہے، اسے چپکے چپکے پڑھا کرو

    کوئی ہاتھ بھی نہ ملائے گا جو گلے ملوگے تپاک سے

    یہ نئے مزاج کا شہر ہے، ذرا فاصلے سے ملا کرو

    مجھے اشتہار سی لگتی ہیں یہ محبتوں کی کہانیاں

    جو کہا نہیں وہ سنا کرو، جو سنا نہیں وہ کہا کرو

    ابھی راہ میں کئی موڑ ہیں، کوئی آئے گا کوئی جائے گا

    تمہیں جس نے دل سے بھلادیا، اسے بھولنے کی دعا کرو

    کبھی حسن پردہ نشیں بھی ہو ذرا عاشقانہ لباس میں

    جو میں بن سنور کہیں چلوں، مرے ساتھ تم بھی چلا کرو

    نہیں بے حجاب وہ چاند سا کہ نظر کا کوئی اثر نہ ہو

    اسے اتنی گرمیٔ شوق سے بڑی دیر تک نہ تکا کرو

    یہ خزاں کی زرد سی شال میں جو اداس پیڑ کے پاس ہے

    یہ تمہارے گھر کی بہار ہے، اسے آنسوؤں سے ہرا کرو


    (بشیر بدر)

    [​IMG]
     
  2. بہت مزیدار ہے
    آپکا بہت بہت شکریا
    بہائی ہم سے شیئر
    کرنے کا
    آگے اور بھی اچہے
    تھریڈس کا
    انتظار رہے گا
    شکریا​
     
  3. Azeem007

    Azeem007 Mobile Expert

    بہت اچھی شیرنگ کی ہے آپ کی مزید اچھی شیرنگ کا انتظار رہے گا ​
     
  4. IQBAL HASSAN

    IQBAL HASSAN Super Moderators



    permalink
    یونہی بے سبب نہ پھرا کرو، کوئی شام گھر بھی رہا کرو

    وہ غزل کی سچی کتاب ہے، اسے چپکے چپکے پڑھا کرو

    کوئی ہاتھ بھی نہ ملائے گا جو گلے ملوگے تپاک سے

    یہ نئے مزاج کا شہر ہے، ذرا فاصلے سے ملا کرو

    ...


    واہ ۔کیا بات ھے ۔
    بہت اچھا لگا اپ کا تھریڈ پڑھ کر
    اپ کابے حد شکریہ

     
  5. naponnamja

    naponnamja Superior Member

Share This Page