1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

وہ عشق جو ہم سے روٹھ گیا

Discussion in 'Design Poetry sharing by normal member' started by nizamuddin, Feb 4, 2016.

  1. nizamuddin

    nizamuddin Regular Member

    وہ عشق جو ہم سے روٹھ گیا، اب اُس کا حال بتائیں کیا
    کوئی مہر نہیں، کوئی قہر نہیں، پھر سچا شعر سنائیں کیا
    اک ہجر جو ہم کو لاحق ہے، تادیر اسے دہرائیں کیا
    وہ زہر جو دل میں اتار لیا، پھر اس کے ناز اٹھائیں کیا
    اک آگ غمِ تنہائی کی، جو سارے بدن میں پھیل گئی
    جب جسم ہی سارا جلتا ہو، پھر دامنِ دل کو بچائیں کیا
    پھر آنکھیں لہو سے خالی ہیں، یہ شمعیں بجھنے والی ہیں
    ہم خود بھی کسی سے سوالی ہیں، اس بات پہ ہم شرمائیں کیا
    ہم نغمہ سرا کچھ غزلوں کے، ہم صورت گر کچھ خوابوں کے
    بے جذبۂ شوق سنائیں کیا، کوئی جواب نہ ہو تو بتائیں کیا
    (اطہر نفیس)

    [​IMG]
     
  2. BlackSoul

    BlackSoul Guest

  3. naponnamja

    naponnamja Superior Member

Share This Page