1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

ايک مکڑا اور مکھی

Discussion in 'Baat Cheet' started by ғσяυм gυяυ, May 31, 2013.

  1. اک دن کسی مکھی سے يہ کہنے لگا مکڑا
    اس راہ سے ہوتا ہے گزر روز تمھارا
    ليکن مری کٹيا کی نہ جاگی کبھی قسمت
    بھولے سے کبھی تم نے يہاں پاؤں نہ رکھا
    غيروں سے نہ مليے تو کوئی بات نہيں ہے
    اپنوں سے مگر چاہيے يُوں کھنچ کے نہ رہنا
    آؤ جو مرے گھر ميں تو عزت ہے يہ ميری
    وہ سامنے سيڑھی ہے جو منظور ہو آنا
    مکھي نے سُنی بات جو مکڑے کی تو بولی
    حضرت! کسی نادان کو ديجے گا يہ دھوکا
    اس جال ميں مکھی کبھی آنے کی نہيں ہے
    جو آپ کی سيڑھی پہ چڑھا ، پھر نہيں اترا
    مکڑے نے کہا واہ! فريبی مجھے سمجھے
    تم سا کوئی نادان زمانے ميں نہ ہو گا
    منظور تمھاری مجھے خاطر تھی وگرنہ
    کچھ فائدہ اپنا تو مرا اس ميں نہيں تھا
    اڑتی ہوئی آئی ہو خدا جانے کہاں سے
    ٹھہرو جو مرے گھر ميں تو ہے اس ميں بُرا کيا!
    اس گھر ميں کئی تم کو دکھانے کی ہيں چيزيں
    باہر سے نظر آتا ہے چھوٹی سی يہ کٹيا
    لٹکے ہوئے دروازوں پہ باريک ہيں پردے
    ديواروں کو آئينوں سے ہے ميں نے سجايا
    مہمانوں کے آرام کو حاضر ہيں بچھونے
    ہر شخص کو ساماں يہ ميسر نہيں ہوتا
    مکھی نے کہا خير ، يہ سب ٹھيک ہے ليکن
    ميں آپ کے گھر آئوں ، يہ اميد نہ رکھنا
    ان نرم بچھونوں سے خدا مجھ کو بچائے
    سو جائے کوئی ان پہ تو پھر اُٹھ نہيں سکتا
    مکڑے نے کہا دل ميں سنی بات جو اس کی
    پھانسوں اسے کس طرح يہ کم بخت ہے دانا
    سو کام خوشامد سے نکلتے ہيں جہاں ميں
    ديکھو جسے دنيا ميں خوشامد کا ہے بندا
    يہ سوچ کے مکھی سے کہا اس نے بڑی بی !
    اللہ نے بخشا ہے بڑا آپ کو رُتبا
    ہوتی ہے اُسے آپ کی صورت سے محبت
    ہو جس نے کبھی ايک نظر آپ کو ديکھا
    آنکھيں ہيں کہ ہيرے کی چمکتی ہوئی کنياں
    سر آپ کا اللہ نے کلغی سے سجايا
    يہ حُسن ، يہ پوشاک ، يہ خوبی ، يہ صفائی
    پھر اس پہ قيامت ہے يہ اُڑتے ہوئے گانا
    مکھی نے سُنی جب يہ خوشامد تو پسيجی
    بولی کہ نہيں آپ سے مجھ کو کوئی کھٹکا
    انکار کی عادت کو سمجھتی ہوں برا ميں
    سچ يہ ہے کہ دل توڑنا اچھا نہيں ہوتا
    يہ بات کہی اور اڑی اپنی جگہ سے
    پاس آئی تو مکڑے نے اچھل کر اسے پکڑا
    بھوکا تھا کئی روز سے اب ہاتھ جو آئی
    آرام سے گھر بيٹھ کے مکھی کو اڑايا​
     
  2. Net KiNG

    Net KiNG VIP Member

    Thanks For Sharing
     
  3. Hello guest, Thank you for Register or you log to see the links!

    Thanks For Sharing
    Click to expand...
    Shukriya Visit Karnay Aur Comments Denay K Liye ...
     

Share This Page