1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

بول کہ لب آزاد ہیں تیرے

Discussion in 'Faiz Ahmed Faiz' started by nizamuddin, Feb 13, 2016.

  1. nizamuddin

    nizamuddin Regular Member

    نظم
    بول کہ لب آزاد ہیں تیرے
    بول، کہ لب آزاد ہیں تیرے
    بول، زباں اب تک تیری ہے
    تیرا سُتواں جسم ہے تیرا
    بول، کہ جاں اب تک تیری ہے
    دیکھ کہ آہن گر کی دکان میں
    تند ہیں شعلے، سرخ ہے آہن
    کھلنے لگے قفلوں کے دہانے
    پھیلا ہر اک زنجیر کا دامن
    بول، یہ تھوڑا وقت بہت ہے
    جسم و زباں کی موت سے پہلے
    بول، کہ سچ زندہ ہے اب تک
    بول، جو کچھ کہنا ہے کہہ لے!
    (فیض احمد فیض)
     
  2. BlackSoul

    BlackSoul Guest

  3. greaaaaaaaaaaaaaaaat
     
  4. Aqibimtiaz786

    Aqibimtiaz786 mr.anjaan

    Bht Khoooob Share Krne Ka Shukriya.........
     
  5. IQBAL HASSAN

    IQBAL HASSAN Super Moderators

    ...........................
    بہت ھی عمدہ شیرینگ ھے ۔
    اپ کابہت شکریہ۔ نوازش ۔
    ...........................
     

Share This Page