1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

اپنے ماضی کے تصوّر سے ہراساں ہوں میں

Discussion in 'Urdu Shair or Qita' started by Admin, Jun 22, 2016.

  1. Admin

    Admin Cruise Member Staff Member


    اپنے ماضی کے تصوّر سے ہراساں ہوں میں
    اپنے گزرے ہوئے ایام سے نفرت ہے مجھے
    اپنی بیکار تمناؤں پہ شرمندہ ہوں
    اپنی بےسود امیدوں پہ ندامت ہے مجھے
    میرے ماضی کو اندھیرے میں دبا رہنے دو
    میرا ماضی میری ذلّت کے سوا کچھ بھی نہیں
    میری امیدوں کا حاصل، میری کاوش کا صلہ
    ایک بےنام اذیت کے سوا کچھ بھی نہیں
    کتنی بےکار امیدوں کا سہارا لے کر
    میں نے ایوان سجائے تھے کسی کی خاطر
    کتنی بےربط تمناؤں کے مبہم خاکے
    اپنے خوابوں میں بسائے تھے کسی کی خاطر
    مجھ سے میری محبت کے فسانے نہ کہو
    مجھ کو کہنے دو کہ میں نے ??انہیں چاہا ہی نہیں??
    اور وہ مست نگاہیں، جو مجھے بھول گئیں
    میں نے ??ان مست نگاہوں کو سراہا ہی نہیں??
    مجھ کو کہنے دو کہ میں آج بھی جی سکتا ہوں
    عشق ناکام سہی، زندگی ناکام نہیں
    انہیں اپنانے کی خواہش، انہیں پانے کی طلب
    شوقِ بےکار سہی، سعیِ غم انجام نہیں
    وہی گیسو، وہی عارض، وہی نظریں، وہی جسم
    میں جو چاہوں تو مجھے اور بھی مل سکتے ہیں
    وہ کنول جن کو کبھی ??ان کے لیے کِھلنا تھا??
    ان کی نظروں سے کہیں دور بھی کِھل سکتے ہیں
     
  2. BlackSoul

    BlackSoul Guest

    [​IMG]
    [​IMG]
    آپکی مزید پوسٹ کا انتظا ر رہے گا۔
     

Share This Page