1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

معرکہ اب کے ہوا بھی تو پھر ایسا ہوگا

Discussion in 'Mohsin Naqvi' started by IQBAL HASSAN, May 10, 2017.

  1. IQBAL HASSAN

    IQBAL HASSAN Management

    معرکہ اب کے ہوا بھی تو پھر ایسا ہوگا
    تیرے دریا پہ مری پیاس کا پہرہ ہوگا

    اس کی آنکھیں ترے چہرے پہ بہت بولتی ہیں
    اس نے پلکوں سے ترا جسم تراشا ہوگا

    کتنے جگنو اسی خواہش میں مرے ساتھ چلے
    کوئی رستہ ترے گھر کو بھی تو جاتا ہوگا

    میں بھی اپنے کو بھلائے ہوئے پھرتا ہوں بہت
    آئنہ اس نے بھی کچھ روز نہ دیکھا ہوگا

    رات جل تھل مری آنکھوں میں اتر آیا تھا
    صورت ابر کوئی ٹوٹ کے برسا ہوگا

    یہ مسیحائی اسے بھول گئی ہے محسنؔ
    یا پھر ایسا ہے مرا زخم ہی گہرا ہوگا
     

Share This Page