1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

عُمرہ

Discussion in 'Eid-ul-Azha & Hajj' started by IQBAL HASSAN, May 12, 2017.

  1. IQBAL HASSAN

    IQBAL HASSAN Management


    عُمرہ


    عمرہ:عمر میں ایک مرتبہ سنت مؤکدہ ہے ، جب کہ حج کی ادائیگی کو واجب کرنے والے شرائط پائے جاتے ہوں۔حوالہ
    عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ قَالَ أَتَى النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَعْرَابِيٌّ فَقَالَ يَا رَسُولَ اللَّهِ أَخْبِرْنِي عَنْ الْعُمْرَةِ أَوَاجِبَةٌ هِيَ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لَا وَأَنْ تَعْتَمِرَ خَيْرٌ لَكَ (مسند احمد مسند جابر بن عبد الله رضي الله عنه ۱۴۴۳۷)
    عمرہ تمام سال میں صحیح ہوتا ہے البتہ عرفہ کے دن ، قربانی کے دن اور ایام تشریق میں عمرہ کا احرام باندھنا مکروہ ہے۔حوالہ
    عَنْ طَاوُوسٍ ؛ أَنَّهُ سُئِلَ عَنِ الْعُمْرَةِ ؟ فَقَالَ :إذَا مَضَتْ أَيَّامُ التَّشْرِيقِ ، فَاعْتَمِرْ مَتَى شِئْتَ إلَى قَابِلٍ. (مصنف ابن ابي شيبة فِي الْعُمْرَةِ ، مَنْ قَال :فِي كُلِّ شَهْرٍ ، وَمَنْ قَالَ :مَتَى مَا شِئْتَ ۴۸۵/۳)۔




    عمرہ
     

Share This Page