1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

ذبح کےمکروہات

Discussion in 'Eid-ul-Azha & Hajj' started by IQBAL HASSAN, May 17, 2017.

  1. IQBAL HASSAN

    IQBAL HASSAN Super Moderators


    ذبح کےمکروہات


    (۱)ناخن اوردانت سے ذبح کرنا مکروہ ہے اور جسم سے جڑے ہوئے ناخن اوردانت سے ذبح کرنا حرام ہے۔حوالہ
    عن رَافِعِ بْنِ خَدِيجٍ قَالَ… أَفَنَذْبَحُ بِالْقَصَبِ فَقَالَ مَا أَنْهَرَ الدَّمَ وَذُكِرَ اسْمُ اللَّهِ عَلَيْهِ فَكُلْ لَيْسَ السِّنَّ وَالظُّفُرَ(بخاري بَاب التَّسْمِيَةِ عَلَى الذَّبِيحَةِ وَمَنْ تَرَكَ مُتَعَمِّدًا۵۰۷۴)

    (۲) جانور ذبح کرنے کے بعد جب تک اس کی جان مکمل طور پر نہ نکل جائے اس وقت تک اس کا چمڑا نکالنا یا اس کے جسم کے کسی حصہ کو کاٹنا مکروہ ہے اس سے جانور کو تکلیف ہوتی ہے۔حوالہ
    عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ زَادَ ابْنُ عِيسَى وَأَبِي هُرَيْرَةَ قَالَا نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ شَرِيطَةِ الشَّيْطَانِ زَادَ ابْنُ عِيسَى فِي حَدِيثِهِ وَهِيَ الَّتِي تُذْبَحُ فَيُقْطَعُ الْجِلْدُ وَلَا تُفْرَى الْأَوْدَاجُ ثُمَّ تُتْرَكُ حَتَّى تَمُوتَ (ابو داود بَاب فِي الْمُبَالَغَةِ فِي الذَّبْحِ۲۴۴۳)(و) كره كل تعذيب بلا فائدة مثل (قطع الرأس والسلخ قبل أن تبرد) أي تسكن عن الاضطراب(الدر المختار كتاب الذبائح ۶۰۷/۵)

    (۳) آج کل ذبح کے لیے جو مشین استعمال کی جارہی ہیں وہ اگر آلۂ ذبح کے اصول کو پورا کرتی ہو تو اس سے جانور کا ذبح کرنا درست ہے ورنہ نہیں۔حوالہ
    عن رَافِعِ بْنِ خَدِيجٍ قَالَ… أَفَنَذْبَحُ بِالْقَصَبِ فَقَالَ مَا أَنْهَرَ الدَّمَ وَذُكِرَ اسْمُ اللَّهِ عَلَيْهِ فَكُلْ لَيْسَ السِّنَّ وَالظُّفُرَ
    (بخاري بَاب التَّسْمِيَةِ عَلَى الذَّبِيحَةِ وَمَنْ تَرَكَ مُتَعَمِّدًا۵۰۷۴)


     

Share This Page