1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

مکارم الاخلاق

Discussion in 'General Topics Of Islam' started by IQBAL HASSAN, May 23, 2017.

  1. IQBAL HASSAN

    IQBAL HASSAN Super Moderators


    مکارم الاخلاق
    *************



    اللہ تعالیٰ نے اپنے نبی ﷺ سے مخاطب ہو کر ارشاد فرمایا:‘‘وَاِنَّکَ لَعَلٰی خُلُقٍ عَظِیْمٍ ’’ اور بے شک آپ اخلاق کے اعلیٰ مرتبے پر فائز ہیں(القلم:۴)

    ہمیں خوش اخلاقی میں رسول اللہ ﷺ کا نمونہ بننے کی کوشش کرنی چاہیئے کیونکہ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے:‘‘لَقَدْ کَانَ لَکُمْ فِیْ رَسُوْلِ اللہِ اُسْوَۃٌ حَسَنَۃٌ ’’ بے شک تمہارے لئے رسول اللہ ﷺ (کی زندگی) میں بہترین نمونہ ہے(الاحزاب:۲۱)

    نواس بن سمعان ؓ نے رسول اللہ ﷺ سے نیکی اور گناہ کے متعلق سوال کیا تو آپ نے فرمایا: ‘‘ البر حسن الخلق و الإ ثم ما حاک في صدرک و کرھت أن یطلع علیہ الناس’’ نیکی حسن اخلاق (کا نام) ہے اور گناہ وہ ہے جو تیرے دل میں کھٹکے اور تو برا جانے کہ لوگ اس سے باخبر ہو جائیں(مسلم:۲۵۵۳)

    ایک اور حدیث میں ہے: ‘‘ما من شئ یوضع فی المیزان أثقل من حسن الخلق و إن صاحب حسن الخلق لیبلغ بہ درجۃ صاحب الصوم و الصلوٰۃ’’ میزان میں حسن اخلاق سے وزنی کوئی چیز نہ ہو گی اور بیشک حسن اخلاق والا وہ درجہ حاصل کر لیتا ہے جو ہمیشہ روزہ رکھنے والے اور نماز پڑھنے والے کے حصہ میں آتا ہے۔(الترمذی: ۲۰۰۳ وقال: ‘‘ھذا حدیث غریب و إسنادہ حسن’’)

    ابو امامہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: ‘‘أناز عیم ببیت فی ربض الجنۃ لمن ترک المراء و إن کان محقاً و ببیت فی وسط الجنۃ لمن ترک الکذب و إن کان مازحاً، وببیت في أعلی الجنۃ لمن حسن خلقہ’’ میں اس شخص کے لئے جنت کے الحراف میں ایک گھر کی ضمانت دیتا ہوں جس نے جھگڑا چھوڑ دیا اگرچہ وہ حق پر ہو اور اس شخص کے لئے جنت کے وسط میں ایک گھر کا ضامن ہوں جس نے جھوٹ کا ارتکاب نہ کیا اگرچہ وہ مزاح کر رہا ہو اور اس شخص کے لئے جنت کے اعلیٰ حصے میں ایک گھر کا ضامن ہوں جس کا اخلاق اچھا ہو ۔ (ابو داؤد:۴۸۰۰و أسنادہ حسن)

    دوسری روایت میں ہے:‘‘خیارکم أحسنکم اخلاقاً’’ تم میں سب سے بہتر وہ ہے جس کے اخلاق اچھے ہوں۔
    (بخاری :۳۵۵۹و مسلم : ۲۳۲۱)

    براء بن عازب رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں:‘‘ کان رسول اللہ ﷺ احسن الناس وجھاً و احسنھم خلقاً’’
    رسول اللہ ﷺ سب لوگوں سے زیادہ خوبصورت اور سب سے زیادہ حسن اخلاق والے تھے۔ (بخاری : ۳۵۴۹ و مسلم: ۲۳۳۷)

    آپ ﷺ سے سوال کیا گیا کہ وہ کونسا عمل ہے جو سب سے زیادہ لوگوں کو جنت میں داخل کرنے کا سبب بنے گا؟
    آپ ﷺ نے فرمایا: ‘‘اللہ کا ڈر اور حسن اخلاق۔ (الترمذی :۲۰۰۴وقال : ‘‘ھذا حدیث صحیح غریب’’)


     

Share This Page