1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔
  2. آئی ٹی استاد کے لیے ٹیم ممبرز کی ضرورت ہے خواہش مند ممبرز ایڈمن سے رابطہ کریں
    Dismiss Notice
  3. Dismiss Notice

ﻧﺎﺧﻦ ﮐﺘﻨﮯ ﺩﻥ ﺗﮏ ﮐﺎﭨﮯ ﻧﮧ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺳﻼﻡ ﺩﺭﮔﺰﺭ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ


آئی ٹی استاد کی ںئی ایپ ڈاونلوڈ کریں اور آئی ٹی استاد ٹیلی نار اور ذونگ نیٹ ورک پر فری استمال کریں

itustad

Discussion in 'Health & Diet' started by Wajahat, Aug 2, 2017.

Health & Diet"/>Aug 2, 2017"/>

Share This Page

  1. Wajahat
    Offline

    Wajahat VIP Member Staff Member
    • 18/33

    ﺍﺳﻼﻡ ﺩﯾﻦ ﻓﻄﺮﺕ ﮨﮯ ﺟﻮ ﻧﻔﺎﺳﺖ ﻃﺒﻊ ﺍﻭﺭ ﺟﺴﻤﺎﻧﯽ ﭘﺎﮐﯿﺰﮔﯽ ﻭ ﻧﻔﺎﺳﺖ ﮐﺎ ﺩﺭﺱ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻓﯽ ﺯﻣﺎﻧﮧ ﺳﺎﺋﻨﺲ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺳﻼﻡ ﻣﯿﮟ ﺻﻔﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﮨﺪﺍﯾﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﻮ ﻧﺼﻒ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﮐﺎ ﺩﺭﺟﮧ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﺴﺎﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﺟﺮﺍﺛﯿﻤﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﭽﺎﯾﺎ ﺟﺎﺳﮑﮯ۔ﻟﻤﺒﮯ ﻧﺎﺧﻦ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﻼﻡ ﻧﮯ ﻣﻨﻊ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﺳﻄﺮﺡ ﻧﺎﺧﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﻨﺪﮔﯽ ﺟﻤﻊ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﯾﻮﮞ ﻟﻘﻤﮯ ﻣﻨﮧ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻟﺘﮯ ﻭﻗﺖ ﺟﺮﺍﺛﯿﻢ ﺑﮭﯽ ﻣﻌﺪﮦ ﻣﯿﮟ ﭼﻠﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ۔ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﺳﺎﺋﻨﺲ ﺑﮭﯽ ﻟﻤﺒﮯ ﻧﺎﺧﻨﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﻨﻊ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ ۔ﻟﻤﺒﮯ ﻧﺎﺧﻦ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺯﺧﻤﯽ ﮐﺮﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻧﺎﺧﻦ ﭨﻮﭦ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﭘﻮﺭﯾﮟ ﺷﺪﯾﺪ ﺯﺧﻤﯽ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔
    ﺍﺳﻼﻡ ﻣﯿﮟ ﻟﻤﺒﮯ ﻧﺎﺧﻨﻮ ﮞ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﻭﺍﺿﺢ ﺗﻨﺒﮩﯿﮧ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ۔ﺟﻮ ﻟﻮﮒ ﺷﻮﻗﯿﮧ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻧﺎﺧﻦ ﺑﮍﮬﺎ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ ﮐﮧ ﺟﺴﻄﺮﺡ ﻣﻮﻧﭽﮭﯿﮟ ﮐﺘﺮﺍﻧﮯ، ﺩﺍﮌﮬﯽ ﺑﮍﮬﺎﻧﮯ، ﻣﺴﻮﺍﮎ ﮐﺮﻧﮯ، ﻭﺿﻮ ﮐﺮﺗﮯ ﻭﻗﺖ ﻧﺎﮎ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﻧﯽ ﭼﮍﮬﺎﻧﮯ، ﮐﻠﯽ ﮐﺮﻧﮯ، ﺧﺘﻨﮯ ﮐﺮﺍﻧﮯ، ﺯﯾﺮﻧﺎﻑ ﺑﺎﻝ ﻣﻮﻧﮉﻧﮯ، ﺑﻐﻠﻮﮞ ﮐﯽ ﺻﻔﺎﺋﯽ ﮐﺮﻧﮯ، ﺍﺳﺘﻨﺠﺎﺀ ﮐﺮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﺪﻥ ﮐﯽ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﮨﮉﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﺟﻮﮌ ﺩﮬﻮﻧﮯ ﮐﻮ ﺍﺳﻼﻡ ﻧﮯ ﺍﻣﻮﺭ ﻓﻄﺮﺕ ﻣﯿﮟ ﺷﻤﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ،ﺍﺳﯿﻄﺮﺡ ﺍﻥ ﺍﻣﻮﺭ ﻓﻄﺮﺕ ﻣﯿﻦ ﻧﺎﺧﻦ ﮐﺎﭨﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﮯ۔ ﻧﺎﺧﻦ ﻧﺠﺎﺳﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﻞ ﮐﭽﯿﻞ ﮐﻮ ﺟﻤﻊ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﮐﺎ ﺫﺭﯾﻌﮧ ﺑﻦ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻟﻤﺒﮯ ﻧﺎﺧﻦ ﺭﮐﮭﻨﺎ، ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﻓﻄﺮﺕ ﺳﮯ ﺑﻐﺎﻭﺕ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺒﯿﺎﺀ ﮐﯽ ﺳﻨﺖ ﺳﮯ ﺭﻭﮔﺮﺩﺍﻧﯽ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﻔﺘﯿﺎﻥ ﮐﺮﺍﻡ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻧﺎﺧﻦ ﺑﮍﮬﺎﻧﺎ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﺷﯿﻮﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺣﯿﻮﺍﻧﯽ ﺧﺼﻠﺖ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺷﺮﯾﻌﺖ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯼ۔ ﻧﺴﺎﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﺎ ﺣﮑﻢ ﮔﺮﺍﻣﯽ ﮨﮯ ” ﭘﺎﻧﭻ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﻓﻄﺮﯼ ﮨﯿﮟ ﻣﻮﻧﭽﮭﻮﮞ ﮐﺎ ﮐﺎﭨﻨﺎ، ﺑﻐﻠﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﻝ ﺍﮐﮭﯿﮍﻧﺎ، ﻧﺎﺧﻦ ﺗﺮﺍﺷﻨﺎ، ﺯﯾﺮﻧﺎﻑ ﺑﺎﻝ ﺻﺎﻑ ﮐﺮﻧﺎ ﺍﻭﺭ ﺧﺘﻨﮧ ﮐﺮﻧﺎ۔ “ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﻓﻄﺮﺕ ﮐﺎ ﺗﻘﺎﺿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺑﮍﮬﺎﯾﺎ ﻧﮧ ﺟﺎﺋﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﺯﺍﺋﺪ ﻧﺎﺧﻦ ﺗﺮﺍﺵ ﺩﺋﯿﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ۔ ﺷﺮﯾﻌﺖ ﻧﮯ ﺍﻥ ﻓﻄﺮﯼ ﺍﻣﻮﺭ ﮐﮯﻟﯿﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﭼﺎﻟﯿﺲ ﺩﻥ ﻣﻘﺮﺭ ﻓﺮﻣﺎﺋﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺣﻀﺮﺕ ﺍﻧﺲ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﺍﻥ ﻓﻄﺮﯼ ﺍﻣﻮﺭ ﮐﯽ ﺻﻔﺎﺋﯽ ﮐﮯﻟﯿﮯ ﯾﮧ ﻣﺪﺕ ﻣﻘﺮﺭ ﮐﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﻢ ﭼﺎﻟﯿﺲ ﺩﻥ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻧﮧ ﮔﺰﺭﻧﮯ ﺩﯾﮟ۔
     
    Last edited by a moderator: Aug 2, 2017
    Admin likes this.
  2. Admin
    Online

    Admin Lover Staff Member
    • 63/65

    سبحان اللہ بہت ہی اچھی معلومات شیئیر کی ہیں شکریہ
     
  3. lodhi13
    Online

    lodhi13 Newbi
    • 8/8

    nice bohat umda
     

Share This Page