1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

Pashto Zaban Taraf

Discussion in 'Pashto' started by ғσяυм gυяυ, Jun 23, 2013.

  1. پشتو زبان
    ایک تعارف


    پشتو زبان پختونوں ، پشتونوں یا پٹھانوں کی زبان ہے اور اس کی تاریخ 2000 سال سے
    لے کر 5000 سال پرانی ہے۔ پشتو کا تعلق زبانوں کے ہند آریائی شاخ سے ہے۔ رگ وید
    اور پارسیوں کے اوستا کتاب میں اس کا ذکر ملتا ہے۔ یہ یقین کیا جاتا ہے کہ پشتو
    افغانستان کے علاقے پکتیا اور پکتیکا میں پیدا ہوئی اور اب افغانستان کے 55 فیصد
    اور پاکستان کے 19 فیصد لوگوں کی مادری زبان ہے۔ مختلف علاقوں میں مختلف لہجوں
    میں بولی جاتی ہے۔ مگر دو اہم لہجے یہ ہیں:

    سخت لہجہ یا یوسفزیوں کا ٹکسالی لہجہ: اس لہجے میں دوسرے زبانوں سے آۓ ہوۓ الفاظ
    کے حرف ش کو خ کے ساتھ بدل لیتے ہیں جیسے پشتو کو پختو، کوشش کو کوخخ ،ج کو ز سے
    بدلتے ہیں جیسے جوان کو زوان، ژ کو گ سے جیسے ژلئ کو گلئ، چ کو س سے جیسے کوچہ کو
    کوسہ بولتے ہیں۔

    نرم یا قندہاری لہجہ: اس میں ش ، ج وغیرہ حروف کو ویسے ہی بولتے ہیں جیسے پشتو،
    جوان، کوشش وغیرہ۔

    پشتو عربی (نسخ) رسم الخط میں لکھی جاتی ہے اور اس کے کل حروف 42 ہیں ۔ ان میں 5
    حروف خالص پشتو کے ہیں جو کہ یہ ہیں، څ، ځ، ږ، ښ، ڼ۔ ان مخصوص حروف کو بایزید
    انصاری (پشتو کے اولین نثری کتاب کے مصنف) اور مشہور شاعر خوشحال خان خٹک نے وضع
    کیا۔ ان حروف کو وضع کرنے کا مقصد ان الفاظ کے املا کا اختلاف ختم کرنا تھا جن کا
    تلفظ مختلف لہجوں میں مختلف ہے۔ جیسے لفظ "پشتو" لیجیے۔ سخت لہجے میں اس کا تلفظ
    "پختو" اور نرم لہجے میں " پشتو" ہے ۔ اس ش اور خ کے املا میں اختلاف ختم کرنے کے
    لیے ایک حرف "ښ" وضع کیا گیا ۔ اب پشتو لفظ "پښتو" لکھا جاتا ہے جسے ہر کوئی اپنے
    لہجے کے مطابق پشتو یا پختو پڑھتا ہے۔ اس کے علاوہ "ی" اور "ے" کے علاوہ تلفظ کے
    لحاظ سے "ی" کے اور بھی تین اشکال ہیں جو کہ یہ ہیں: "ې"، "ئ"، "ۍ"
    پشتو ذخیرۂ الفاظ میں زیادہ حصہ ہندی، فارسی اور عربی کا ہے۔ پاکستانی علاقوں میں
    اس پر اردو کا اثر زیادہ ہے۔ اسی طرح افغانستان میں اس پر زیادہ اثر فارسی کا ہے۔



    پشتو حروف تہجی


    پشتو کے کل حروف 42 ہیں۔ 30 تو وہ ہیں جو عربی اور فارسی میں مروج ہیں۔ 4 حروف وہ
    ہیں جو فارسی میں تو مروج ہیں مگر عربی میں نہیں ہیں اور وہ یہ ہیں:

    پ، چ، ژ اور ګ (گ)۔



    څ، ځ، ږ، ښ اور ڼ۔

    ا،ب، پ، ت، ټ، ث، ج، ځ، ح، خ، چ، څ، د، ډ، ذ، ر، ړ، ز، ژ، ږ، س، ش، ښ، ص، ض، ط،
    ظ، ع، غ، ف، ق، ک، ګ، ل، م ن، ڼ، و، ھ،ء، ی، ے

    اب میں ان حروف کا ذکر کروں گی جن کی شکلیں آپ کے لیے نامانوس ہیں:

    ټ: ٹ کا متبادل ہے۔ مثال: ټیلی فون

    ډ: ڈ کا متبادل ہے۔ مثال: ډنډه

    ړ: ڑ کا متبادل ہے۔ مثال: ړوند (اندها)

    ګ: گ کا متبادل ہے۔ ګول
    پشتو کے مخصوص حروف


    جیسا میں نے عرض کیا تھا کہ پشتو کے 42 حروف میں سے 5 حروف پشتو کے ساتھ مخصوص
    ہیں، کسی اور زبان میں نہیں پائے جاتے۔ ان حروف کی مختصر تفصیل یہ ہے:

    څ: اس کا تلفظ تسیم (Tseem) کریں گے۔ یہ حرف ان الفاظ میں آتا ہے جن کا تلفظ سخت
    لہجے میں پشتو بولنے والے ‘تس‘ سے کرتے ہیں مگر نرم لہجہ (یا قندہاری لہجہ) بولنے
    والے اس کا تلفظ "چ" سے کرتے ہیں۔
    مثالیں:
    لفظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سخت لہجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نرم لہجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پشتو املا
    چادر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تسادر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ چادر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ څادر
    چوپایہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تساروے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چاروے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ څاروے

    ځ: اس کا تلفظ دزیم (Dzeem) ہے۔ یہ ان الفاظ میں آتا ہے جنہیں سخت لہجہ والے "دز"
    اور نرم لہجے والے "ج" سے بولتے ہیں۔

    مثالیں:
    لفظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سخت لہجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نرم لہجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پشتو
    املا
    جوان۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دزوان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جوان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ځوان
    فوج ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فوز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فوج ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فوځ
    جگہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جائ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دزائ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ځاۍ

    ږ: اس کو گے (Gey) بولتے ہیں۔ یہ حرف ان الفاظ میں لایا جاتا ہے جسے ہم (سخت لہجے
    میں) گ کے ساتھ بولتے ہیں جبکہ قندہاری لہجہ بولنے والے ژ بولتے ہیں۔

    مثالیں:
    لفظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سخت لہجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نرم لہجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پشتو
    املا
    ژالہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ژلئ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ګلۍ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ږلۍ
    داڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ژیرہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گِرہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ږیره
    هم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مونژ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مونگ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مونږ

    ښ: اس کو خین (Kheen) بولتے ہیں اور یہ حرف ش اور خ کا آواز دیتا ہے۔ بعض صورتوں
    میں یہ املا میں تو آتا ہے مگر بولنے میں نہیں آتا۔

    مثالیں:
    لفظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سخت لہجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نرم لہجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پشتو
    املا
    لشکر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لشکر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ل خکر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    لښکر
    شکیل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شکلے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خکُلے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ښکلے
    میں (in)۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کشے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کښې
    گالی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شکنزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کنزل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ښکنځل

    ڼ : اس کو " نوڑ" بولتے ہیں۔ یہ دراصل پشتو میں نون غنہ کا قائم مکان ہے مگر فرق
    یہ ہے کہ یہ کبھی اکیلے نہیں آتا، ہمیشہ ‘ڑ‘ کے ساتھ آتا ہے اور ن اور ڑ کا
    مشترکہ آواز دیتا ہے۔

    مثالیں:
    لفظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سخت لہجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نرم لہجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پشتو
    املا
    سیب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔ منڑہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ منڑہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ مڼه
    روشنی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رنڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رنڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔ رڼا

    پشتو میں " ی" کی مختلف صورتیں

    پشتو میں بہت سے الفاظ حرف ی پر ختم ہوتے ہیں۔ ی کی یہ آواز مختلف حالات میں
    مختلف ہوتی ہے۔ جیسے
    سړے (سڑے) sarhay بمعنئ آدمی (واحد)
    سړی (سڑی) Sarhee بمعنئ بہت سے آدمی (جمع)
    سړې (سڑے) Sarhei بمعنئ نیم گرم
    ځئ (زئ) بمعنئ جائیں
    جینۍ (جینئ) بمعنئ لڑکی

    آپ نے دیکھا یہاں ی کی آواز مختلف لفظوں میں مختلف ہے، سوائے آخری دو لفظوں کے
    جہاں ی کی آواز تو ایک جیسی ہے مگر املا میں فرق ہے (اس کی وضاحت آگے آرہی ہے)۔

    تفصیل:

    ی: اس کو یاۓ معروف بھی کہتے ہیں۔ اگر لفظ کے خری ی سے پہلے والے حرف پر زیر ہو
    تو اس کو یاۓ معروف (ی) کے ساتھ لکھا جاۓ گا۔ جیسے سڑِی، مڑِی۔ لرگِی۔ یاۓ معروف
    اکثر ان لفظوں کے آخر میں آتی ہے جو جمع کے لیے ہوتے ہیں جیسے لرگی (لکڑیاں ) یا
    فعل حال کا جملہ ہو جیسے ہغہ گوری ( وہ دیکھتا ہے)۔

    ے:
    اس کو یاۓ مجہول بھی کہتے ہیں۔ یہ مذکر الفاظ کے آخر میں آتی ہے۔ اس میں ے سے
    پہلے والے حرف پر زبر ہوتا ہے جیسے سڑے( شخص)، مڑے (مردہ)، لرگے (لکڑی)

    ې:

    اس کو نرم ی بھی کهتے ہیں۔ اس میں ی کے نیچے (اوپر نیچے) دو نقطے ہوتے ہیں۔ اس کی
    آواز نہ ے کی طرح لمبی ہوتی ہے اور نہ ی کی طرح چھوٹی بلکہ درمیانی آواز ہوتی ہے۔
    جیسے سړې، کښې، مړې وغیره۔

    ئ:

    اس کو یاۓ فعلیہ کہتے ہیں اور اس لفظ کے آخر میں آتی ہے جس سے کسی کام کا ہونا
    ظاہر ہو اور یہ فعل امر کا جمع صیغہ ہو جیسے ، اوکڑئ (کریں) ، مہربانی اوکڑئ (
    مہربانی کریں) اوخورئ ( کھائیں) وغیرہ

    ۍ۔

    اس کو یاۓ تانیث کہتے ہیں ۔ تلفظ میں یاۓ فعلیہ جیسی ہوتی ہے مگر یہ مؤنث اسم کے
    آخر میں آتا ہے۔ جیسے جینۍ (لڑکی)، مرغۍ (پرندہ) ۔
     
  2. Net KiNG

    Net KiNG VIP Member

  3. Hello guest, Thank you for Register or you log to see the links!


    [​IMG]
    Click to expand...
    Shukriya Visit Karnay Aur Comments Denay K Liye ...
     
  • Jal Pari

    Jal Pari Guest

    ڈیر خہ
    :a030:​
     
  • Hello guest, Thank you for Register or you log to see the links!

    ڈیر خہ
    :a030:​
    Click to expand...
     
  • Share This Page