1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔

Kya kahun tum se main ke kya hai ishq

Discussion in 'Roman Urdu Poetry' started by Mohammad Sajjad, Jan 23, 2014.

  1. Mohammad Sajjad

    Mohammad Sajjad Senior Member

    Kya kahun tum se main ke kya hai ishq,
    Jaan ka rog hai, bala hai ishq.​
    Ishq hi ishq hai jahaan dekho,
    Saare aalam mein bhar raha hai ishq.​
    Ishq maashuq ishq aashiq hai,
    Yaani apna hi mubtala hai ishq.​
    Ishq hai tarz-o-taur ishq ke taeen,
    Kahin banda kahin Khuda hai ishq.​
    Kaun maqsad ko ishq bin pohuncha,
    Aarzoo ishq wa mudda hai ishq.​
    Koi khwaahan nahin mahabbat ka,
    Tu kahe jins-e-narawa hai ishq.​
    Mir ji zarad hote jaate hain,
    Kya kahin tum ne bhi kiya hai ishq..​
     
  2. BOHAT KHOOB
    Thanks For Nice Sharing
     
  3. Net KiNG

    Net KiNG VIP Member

    اچھی شاعری ہے
    جاری رکھیں​
     

Share This Page